کتاب کا تعارف| فرہنگِ تلفظ


کتاب کا تعارف| فرہنگِ تلفظ

کچھ پاکستانی ٹی وی چینلوں پر ادا کیے جانے والے اردو تلفظ کسی برے خواب سے کم نہیں۔ مگر چینل مالکان اور اینکرز کو شاید معلوم بھی نہ ہو کہ وہ ہماری قومی زبان کا کس بے رحمی سے قتل کر رہے ہیں۔

تسنیم خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق، اپنی اردو گفتگو میں انگریزی کے الفاظ اور فقروں کو شامل کرنے کے علاوہ یہ معصوم اینکرز کئی اردو الفاظ کا غلط تلفظ ادا کرتے ہیں، جس سے کبھی کبھی جملہ مضحکہ خیز حد تک غلط ہوجاتا ہے۔

ایک اور مسئلہ ٹی وی چینلوں کی غیر معیاری گرامر ہے۔ مثال کے طور پر اردو کے لفظ 'عوام' کو کچھ ٹی وی چینل مؤنث اور واحد کے طور پر استعمال کرتے ہیں جبکہ یہ 'عام' کی جمع ہے اور اسے ہمیشہ مذکر کے طور پر استعمال کیا جاتا رہا ہے۔

گرامر یا تلفظ کے مسائل عام طور پر ڈکشنری یا فرہنگ سے مدد لے کر حل کیے جاتے ہیں کیوں کہ زیادہ تر ڈکشنریوں میں تلفظ کا خیال رکھا جاتا ہے اور اسے واضح انداز میں لکھا جاتا ہے۔ جب تلفظ کی بات آئے، تو انگریزی میں اس پر بہت کام کیا گیا ہے۔ انگریزی تلفظ پر کیے گئے نمایاں ترین کاموں میں سے ایک The English Pronouncing Dictionary ہے جسے ڈینیئل جونز (1967-1881) نے مرتب کیا تھا، اور یہ پہلی بار 1917 میں شائع ہوئی۔ یہ ڈکشنری اب بھی تازہ ترین ایڈیشنز کی صورت میں دستیاب ہے۔

یونیورسٹی کالج لندن میں علم الاصوات (گفتاری آوازوں کا علم) کے پروفیسر ڈینیئل جونز کو تلفظ اور ادائیگیوں میں اپنے مایہ ناز کام کے لیے جانا جاتا ہے۔ وہ پہلے شخص تھے جنہوں نے لفظ 'phoneme' کو اس کے موجودہ معنیٰ میں استعمال کیا، یعنی: آواز کی اکائی؛ کسی زبان کی وہ مخصوص و منفرد آواز، جو ایک لفظ کو دوسرے لفظ سے ممتاز کرتی ہے۔

انگریزی علم الاصوات پر ان کے کام کے علاوہ جونز کو بنیادی حروفِ عِلّت کا تصور دینے کے لیے بھی جانا جاتا ہے۔ انہوں نے یہ دکھایا کہ کس طرح حروفِ عِلّت کی ادائیگی کے وقت زبان اپنی جگہ تبدیل کرتی ہے۔ اب بھی لسانیات میں یہ نظام استعمال کیا جاتا ہے۔

مگر 'مثالی' تلفظ کی جونز کی تعریف وقت کے ساتھ بدل گئی۔ شروع شروع میں تو وہ انگریزی بولنے والے تعلیم یافتہ برطانوی افراد کے معیاری تلفظ کو 'پبلک اسکول پروننسیئشین' یا پی ایس پی کہا کرتے تھے، کیوں کہ ان کے نزدیک ان اسکولوں میں طلباء زبان کے معاملے میں اپنی 'مقامی باریکیوں' کو بھول کر وہ تلفظ استعمال کرتے جو روز مرّہ کی گفتگو میں عام طور پر سنائی دیتا۔

بعد میں انہوں نے میاری تلفظ کی تعریف پی ایس پی سے تبدیل کر کے 'ریسیوڈ پروننسیئشن' (آر پی) کر دی، جو کہ لندن اور اس کے آس پاس کے تعلیم یافتہ الفاظ کا تلفظ تھا۔ جونز ڈکشنری کے چودہیں ایڈیشن کے ایڈیٹر نے لکھا تھا کہ آر پی کا مزید دفاع نہیں کیا جا سکتا مگر اس فقرے کے عمومی اور وسیع استعمال کی وجہ سے اسے باقی رکھا گیا۔ ڈکشنری کے تازہ ترین ایڈیشن کے مطابق جونز انگریزی کے جس لہجے کے بارے میں بات کر رہے تھے، اسے اب 'برٹش انگلش' کہا جاتا ہے۔

اردو تلفظ کی جانب واپس آئیں تو اس کا مسئلہ تھوڑا پیچیدہ ہے۔ نہ صرف یہ کہ اردو پورے برِصغیر کے کئی خطوں میں مقامی لہجوں میں بولی جاتی ہے، بلکہ اس میں شامل کئی عربی اور فارسی الفاظ اپنا تلفظ، اور کچھ معاملات میں تو اپنے اصل معانی بھی کھو چکے ہیں۔

ایک مخصوص اردو لفظ، چاہے عربی یا فارسی سے آیا ہو یا سنسکرت یا پراکرت سے، اس کے کئی مختلف تلفظ اور ہجے ہو سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ گرامر کے اعتبار سے ان کا استعمال بھی حیران کن حد تک مختلف ہو سکتا ہے۔ مثال کے طور پر 'بلبل' اور 'دہی' دونوں کو مذکر اور مؤنث کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔

اس طرح کے پیچیدہ مسائل کو حل کرنے اور مختلف لہجوں اور تلفظ کی بحث ختم کرنے کے لیے اردو کی ایک فرہنگِ تلفظ کی ضرورت تھی۔ اور یہ کام صرف شان الحق حقی کے پائے کے شخص ہی کر سکتے تھے۔ مقتدرہ قومی زبان یا نیشنل لینگوئیج اتھارٹی، جو اب ادارہءِ فروغِ قومی زبان (آئی ایف کیو زیڈ) کہلاتا ہے، اس کے پہلے چیئرمین کے طور پر افتخار عارف نے حقی صاحب سے کہا کہ وہ ایسی ایک فرہنگ ترتیب دیں۔ چنانچہ شان الحق حقی نے فرہنگِ تلفظ مرتب کی جو کہ اردو کی معدودے چند ایسی کتابوں میں سے ایک ہے۔

ڈکشنری میں مختلف تلفظات کا خیال رکھتے ہوئے یہ بتایا گیا ہے کہ کونسا کس جگہ استعمال کیا جانا چاہیے۔ ایک خصوصیت تلفظ کی صحیح ادائیگی کے لیے متعارف کروایا گیا نظام بھی تھی: تاکہ یقینی بنایا جا سکے کہ تلفظ صحیح ادا کیا جا رہا ہے۔ اس کے لیے اعراب اور قوسین کے اندر مخفف بھی دیے گئے جس میں ہر حرف کے اعراب کا الگ الگ حوالہ دیا گیا۔

اردو میں اعراب دکھانے کے دو نظام ہیں جنہیں 'مکتوبی' (تحریری) اور 'ملفوظی' (گفتاری) کہا جاتا ہے۔ کچھ معاملات میں وہ الفاظ جو بظاہر تو جمع ہوتے ہیں، مگر انہیں واحد، یا واحد کو جمع کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے، ان الفاظ کا خیال رکھا گیا۔

پروفیسر فتح محمد ملک اور ڈاکٹر انوار احمد کے ادوار میں شائع ہونے والے دیگر ایڈیشنز میں کچھ نقادوں کی نشاندہی کردہ اغلاط کو حل کیا گیا۔ اب ادارے نے 732 صفحات پر مشتمل فرہنگِ تلفظ کا چوتھا ایڈیشن شائع کیا ہے۔ اس دفعہ کی خصوصیت اس کی خطِ نستعلیق میں اشاعت ہے جو کہ زیادہ خوبصورت ہے اور جسے زیادہ ترجیح دی جاتی ہے۔

سب سے زیادہ دیکھی گئی پاکستان خبریں
اہم ترین پاکستان خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری